عوام پر بجلی گِرا دی گئی، اضافی ٹیکسز کے ساتھ مہنگی بجلی متاثرین منگلا ڈیم کا مقدر۔

چک سواری (نمائندہ خصوصی) برقیات صارفین پرظلم کی انتہا، اضافی ٹیکسز اور مہنگی یونٹس کے بل دیکھ کرصارفین کے سرچکراگئے،ایک سویونٹس کے کمرشل بل میں 1252روپے اضافی رقم ٹیکسزکی مدمیں شامل کردی،اہلِ چک سواری نے احتجاج کے لیے سرجوڑلیے،حکومت نے اضافی ٹیکسزواپس نہ لیے تو پر تشدد احتجاجی تحریک چلانے کاعندیہ۔

تفصیلات کے مطابق ماہ رواں فروری2021ء میں برقیات صارفین پربجلی بلات کی مدمیں ایک اوربم گرادیاگیا۔پاکستان کی ترقی،خوشحالی اورہریالی کی خاطردو مرتبہ عظیم قربانیاں دینے والے متاثرین منگلاڈیم کے شہرمیرپورکے برقیات صارفین مہنگی یونٹس کابل دیکھ کرششدررہ گئے۔ایک سویونٹس کے کمرشل بل میں 1252 روپے کے ٹیکسزشامل کرکے صارف کو تین ہزار باون (3052) روپے کابل تھمادیاگیا۔فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کی مدمیں بھی سینکڑوں روپے بل میں شامل کیے گئے ہیں۔

ایک طرف برقیات ملازمین صارفین کواضافی یونٹس کابل بھیج کرظلم وزیادتی کانشانہ بنارہے ہیں اوربرقیات صارفین عاجزآچکے ہیں دوسری حکومت نے غریب عوام کومزیدمہنگائی کے پہاڑتلے دفنانے کے لیے بل یونٹس میں ہوشربااضافہ کردیا ہے۔گذشتہ ماہ جنوری2021ء اوررواں ماہ کے بلات بجلی میں واضح فرق دیکھنے میں آیاہے جس پراہل چک سواری نے شدیداحتجاج کرتے ہوئے حکومتِ پاکستان کے پالیسی سازوں اورحکومتِ آزادکشمیرکے اربابِ اختیارسے پرزورمطالبہ کیاہے کہ پاکستان کی ترقی وخوشحالی کی خاطرعظیم قربانیاں دینے والے متاثرین منگلاڈیم کوقربانی کابکرابنانے سے گریزکیاجائے۔

معاہدے کے مطابق مفت بجلی دیے جاناتودورکی بات مہنگی ترین بجلی برقیات صارفین کے ساتھ صریحاًزیادتی ہے جس پرخاموش نہیں رہیں گے بلکہ اگرآمدہ چند دنوں تک اضافی ٹیکسزاورفی یونٹ قیمت میں کیاگیااضافہ واپس نہ لیاگیاتو پرتشدد احتجاجی تحریک چلائیں گے جس کے نتائج کی تمام ترذمہ داری حکومتِ پاکستان وآزادکشمیرکے اربابِ اختیارواقتدارپرعائدہوگی۔#