چکسواری بازار کے مسائل اور حل کی تجاویز، حکمرانوں سمیت دیگر ذمہ داران کا تعین کر دیا گیا۔

چک سواری (نمائندہ خصوصی) انتظامیہ وٹریفک پولیس کی نااہلی، چک سواری بازارمیں ٹریفک کے مسائل حل نہ ہوسکے، طویل ٹریفک جام اورپریشرہارن کے بے دریغ استعمال نے اہل چک سواری کوذہنی مریض بنادیا، حکامِ بالاسے نوٹس لے کراصلاح احوال کامطالبہ۔

تفصیلات کے مطابق ضلعی ومقامی انتظامیہ میونسپل کمیٹی چک سواری اور ٹریفک پولیس اہلکاران فرائض منصبی کی ادائیگی میں شدیدغفلت کے مرتکب ہورہے ہیں جس بناء آزادکشمیرکاقدیم تاریخی وتجارتی قصبہ چک سواری مسائلستان بناہواہے اورمسائل کم ہونے کانام ہی نہیں لے رہے۔چک سواری بائی پاس روڈ کی عدمِ تعمیر کی وجہ سے تمام ہیوی ٹریفک بھی چک سواری بازارسے گزرتی ہے اورساتھ غلط کارپارکنگ سے بازارمیں طویل ٹریفک جام معمول بن چکاہے۔

ہیوی ٹریفک اوررکشہ ڈرائیوروں نے پریشرہارن کابے دریغ استعمال کرکے تاجروں وخریداروں کوذہنی مریض بنادیاہے۔میونسپل کمیٹی کے اربابِ اختیارنے چک سواری بازارسے تجاوزات ہٹاناجرم سمجھ رکھاہے جس بناء تاجروں نے تجاوزات کرکے مرکزی شاہراہ کوگلی میں تبدیل کردیاہے۔مسائل کی بھرماراورسہولیات کے فقدان کے باعث چک سواری میں تجارتی سرگرمیاں دن بدن ماندپڑرہی ہیں۔

چک سواری کے سماجی حلقوں نے ضلعی انتظامیہ سے پرزورمطالبہ کیاہے کہ چک سواری بازارمیں ٹریفک کے مسائل کے حل کے لیے ٹھوس اقدامات اٹھائے جائیں۔بائی پاس روڈکی فی الفورتعمیر سمیت چک سواری بازارسے تجاوزات کے خاتمے کے لیے گرینڈآپریشن شروع کیاجائے اورساتھ چک سواری میں فرض شناس ٹریفک پولیس اہلکاران تعینات کیے جائیں جووقت گزاری کے بجائے ٹریفک کی روانی کوبرقراررکھنے کے لیے اپنی ذمہ داریاں نبھائیں تاکہ چک سواری بازارکے مسائل میں خاطرخواہ کمی واقع ہواورتاجرواہل علاقہ سکھ کاسانس لے سکیں۔#