دہشت گردی بارے ہمارے خدشات درست نکلے، نگہت گردیزی

اسلام آباد(خبرنگار) متحدہ کشمیر پیپلز نیشنل پارٹی کی مرکزی رہنما سیدہ نگہت گردیزی نے کہا ہے کہ دہشتگرد تنظیموں بارے جس خدشے کا اظہار یو کے پی این پی اور اسکی قیادت شروع سے کر رہی تھی اج امریکہ سمیت دنیا بھر سے اسی بارے آواز بلند ہو رہی ہے۔ ہمارے قائد سردار شوکت علی کشمیری نے جب دہشتگردوں کیخلاف آواز اٹھائی تو انھیں غدار کہہ کر جلا وطن ہونے پر مجبور کر دیا گیا، کشمیر میں ظلم و بربریت اور معصوم انسانوں کے قتل عام کے باوجود امریکہ میں بھارتی وزیراعظم مودی کی جو عزت افزائی کی گئی اسکی بنیادی وجہ مقبوضہ کشمیر میں جاری پراکسی وار ہے جسے بھارت دنیا بھر میں پاکستان کی مداخلت قرار دے کر خود کو مظلوم ظاہر کرتا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انھوں نے میڈیا سے بات چیت میں کیا۔ انھوں نے کہا کہ یہ پی این پی کی قیادت کی دوراندیشی ہی تھی کہ ہم شروع سے ہی پرتشدد کاروائیوں کو مسترد کرتے رہے۔ حکومت پاکستان نے ہماری بات پر غور کیا ہوتا تو آج دنیا میں یہ سب نہ دیکھنا پڑتا۔ ہم آج بھی واضع طور پر اعلان کرتے ہیں کہ مسئلہ کشمیر کا حل بھارت و پاکستان کی دشمنی یا جنگ و جدل میں نہیں ہے بلکہ ہر مسئلہ کا حل پرامن بات چیت و مزاکرات میں ہے۔ انھوں نے کہا کہ حکومت پاکستان اگر کشمیریوں سے مخلص ہے تو مسئلہ کشمیر کو کشمیریوں کی مرضی کے مطابق حل کرنے کیلئے کردار ادا کرے۔ اسکے لیے ضروری ہے کہ مسئلہ کشمیر پر کشمیریوں کی رائے کا احترام کیا جائے اور انھیں اپنے مستقبل بارے فیصلہ کرنے کا اختیار دیا جائے۔ پاکستان کے پاس صرف یہی ایک راستہ ہے کہ آزاد کشمیر حکومت کو تسلیم کرے اور بھارت کو دنیا کے سامنے مجبور کرے کہ وہ بھی اپنے زیر کنٹرول کشمیر پر سے قبضہ ختم کرے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں