برطانوی شہریوں کیلئے خصوصی پروازوں کا شیڈول، برطانوی ایم پیز اور حکومتِ پاکستان کے شکر گزار ہیں، کونسلر عارف حسین

چک سواری (نمائندہ خصوصی) ٹھیکریاں چک سواری ضلع میرپور (آزادکشمیر) سے تعلق رکھنے والے کونسلر عارف حسین چودھری لیڈزسٹی کونسل نے کہا ہے کہ عمران حسین ایم پی بریڈ فورڈ ایسٹ اور رچرڈ برگن ایم پی لیڈز ایسٹ کاشکرگزار ہوں جن کی ذاتی دل چسپی اور کاوشوں سے پاکستان و آزاد کشمیر میں موجود برطانوی شہریوں کوریلیف ملا۔ حکومتِ پاکستان نے برطانوی عوامی نمائندوں کی تحریک پر پاکستان و آزاد کشمیر میں پھنسے برطانوی شہریوں کی وطن واپسی کے لیے خصوصی پروازیں چلانے کااعلان کیا اور ساتھ ائیرلائن ٹکٹ کی قیمت میں بھی خاطرخواہ کمی کی۔ اب برطانوی شہری ایک لاکھ دس ہزار روپے یا 525 پاؤنڈ کے عوض برطانیہ کا ائیرٹکٹ حاصل کرکے اپنے وطن اپنے پیاروں کے پا س جاسکتے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے آزاد پریس کلب چک سواری کے صحافیوں سے خصوصی بات چیت کرتے ہوئے کیا۔

کونسلر عارف حسین چودھری نے کہاکہ میں گذشتہ چندہفتوں سے یہاں آبائی علاقے چک سواری آزادکشمیر میں موجودہوں اوریہاں موجود برطانوی شہریوں کے مسائل کودیکھتے کا اتفاق ہوا جس پر ایم پی بریڈ فورڈ ایسٹ عمران حسین اور ایم پی لیڈز ایسٹ رچرڈ برگن سے مسلسل رابطے میں رہا اور انہیں یہاں موجود برطانوی شہریوں کے مسائل سے آگاہ کرتا رہا جس پر انہوں نے حکومت آزاد کشمیر و پاکستان کے اربابِ اختیار اور پاکستان میں موجود برطانوی ہائی کمیشن ڈاکٹر ٹرنر کوتمام ترحالات و تحفظات سے آگاہ کرتے ہوئے اصلاح احوال کامطالبہ کیا۔آج ہماری تحریک سے برطانوی شہریوں کے واپس برطانیہ جانے کی راہ ہموار ہوئی۔

کونسلر عارف حسین چودھری نے کہاکہ دکھ اور افسوس اس بات کاہے کہ یہاں آزادکشمیر بالخصوص میرپور ڈویژن میں موجودکشمیریوں کے اراکین اسمبلی اورحزبِ اختلاف کے راہ نماؤں نے برطانوی شہریوں کے مسائل بارے کوئی آواز بلند نہیں کی۔ آزادکشمیرمیں موجودبرطانوی شہریوں کے مسائل کے لیے برطانوی اراکین اسمبلی سے مددلینایہاں آزادکشمیرمیں موجوداراکین اسمبلی کے لیے شرم کی بات ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان انٹرنیشنل ائیرلائنزکی خصوصی پروازیں چلانے کے ساتھ ساتھ لاک ڈاؤن کے دوران اجازت نامے کے سلسلے میں بھی برطانوی شہریوں کے لیے خصوصی نرمی کی ضرورت ہے۔ ضلعی انتظامیہ سے اجازت نامہ حاصل کرنے کی بجائے اگر آزاد کشمیر کے انٹری پوائنٹس پرموجود عملہ کوائیرلائن ک اٹکٹ دکھا کراجازت دی جائے تو زیادہ مناسب رہے گا اور اس سے وقت اورپیسے کی بچت بھی ہوگی۔ اس کے ساتھ ساتھ پی آئی اے کے ذمہ داران اس بات کابھی خیال رکھیں کہ ایک خاندان سے تعلق رکھنے والوں کوایک ہی پروازمیں برطانیہ جانے دیاجائے بصورتِ دیگرمسائل پیدا ہوں گے۔

انہوں نے حکومتِ پاکستان و آزاد کشمیرکے اربابِ اختیار اور برطانوی ہائی کمیشن کے عملہ سے مطالبہ کرتے ہوئے کہاکہ پی آئی اے کی خصوصی پروازیں چلانے کے ساتھ ساتھ دیگر ممکنہ مسائل کے حل کے بھی تحریک کی جائے تاکہ برطانوی شہری عزت و احترام اور آسانی کے ساتھ برطانیہ کاسفرکرنے کے قابل ہوسکیں۔#

اپنا تبصرہ بھیجیں