چکسواری، قتل کی لرزہ خیز واردات، نامعلوم افراد نے جنگویز اختر کو کیسے قتل کیا اور پولیس تفتیش کہاں تک پہنچی؟‌جانیے اس خبر میں.

چک سواری (شہزادعظیم سے) چک سواری میں قتل کی لرزہ خیزواردات، نامعلوم مسلح افرادنے برقیات ملازم پرگولیوں کی بوچھاڑکردی، جنگویزاخترشدیدزخمی حالت میں ڈی ایچ کیومیرپوردم توڑگئے، پولیس نے گیارہ افرادکے خلاف مقدمہ درج کرکے تفتیش رواں کردی، دن دیہاڑے قتل کی واردات سے عوام علاقہ خوف وہراس میں مبتلا، قانون نافذکرنے والے اداروں سے قاتلوں کی فوری گرفتاری کامطالبہ۔

تفصیلات کے مطابق آج بروزسوموارضلع میرپور کے نواحی قصبہ چک سواری کی معروف شخصیت برقیات ملازم جنگویزاخترساکن لدڑبچوں کوسکول چھوڑنے آئے توتقریباً آٹھ بجے صبح بڑوٹیاں بائی پاس روڈ پرواقع نجی تعلیمی ادارے کے مرکزی دروازے کے قریب نامعلوم مسلح افرادنے اُن پرگولیوں کی بوچھاڑکردی۔جنگویزاختراپنی کار نمبری NA889 میں ہی متعددگولیاں لگنے سے شدیدزخمی ہوگئے جب کہ نامعلوم مسلح افرادموٹرسائیکل پرباآسانی فرارہوگئے۔

اطلاع ملتے ہی پولیس تھانہ چک سواری کی نفری بھی موقع پرپہنچ آئی۔جنگویز اخترکوفوری طورپرطبی امدادکے لیے دیہی مرکزصحت چک سواری لایاگیالیکن ڈاکٹر،ڈسپنسرسمیت کوالیفائیڈسٹاف نہ ہونے کے سبب ایمبولینس کے ذریعے ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹراسپتال میرپورلے جایاگیاجہاں دن تقریبا سوادس بجے وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے خالق حقیقی سے جاملے۔جنگویزاخترکی میت پوسٹ مارٹم و ضروری قانونی کارروائی کے بعدآبائی گاؤں لدڑچک سواری لائی گئی جہاں انہیں شام ساڑھے سات بجے نمازِ جنازہ کی ادائیگی کے بعدآبائی قبرستان میں سپردِ خاک کیاجائے گا۔

ادھرپولیس نے تفتیش کاآغازکرتے ہوئے موقع واردات کامعائنہ کرنے اوربابرحسین ولدعنایت ولی ساکن لدڑکی تحریری درخواست پرنو(9)نامزداوردو(2)نامعلوم افرادکے خلاف زیردفعات34/109،302مقدمہ درج کرتے ہوئے تین نامزدملزمان سہیل،راشد،لقمان پسران محمدفاروق ساکنان لدڑحال نیوٹاؤن چک سواری کوگرفتارکرکے پابندسلاسل کردیا۔درخواست میں درج ہے کہ نامزدملزمان کے ساتھ متعددفوجداری مقدمات عدالتوں میں زیرسماعت ہیں اورقبل ازیں بھی سائل ومقتول جنگویزاخترکوجان سے مارنے کی کوششیں کی گئیں۔

واقع کی اطلاع پرڈی ایس پی رینج ڈڈیال خواجہ عبدالقیوم بھی چک سواری پہنچ آئے اوراپنی نگرانی میں مقدمہ درج کرکے تفتیش شروع کروادی۔ایس ایچ اوتھانہ پولیس چک سواری انسپکٹرمہتاب اسلم نے ملزمان کی فوری گرفتاری کے لیے علاقے کی ناکہ بندی کرواکرجدیدسائنسی بنیادوں پرتحقیقات کاآغازکردیا۔

دن دیہاڑے قتل کی لرزہ خیزواردات پرعوام علاقہ میں شدیدخوف وہراس پھیل گیا۔چک سواری کے سماجی حلقوں نے اس واقع پرردعمل دیتے ہوئے کہاکہ ایک جان کوقتل کرناپوری انسانیت کے قتل کے مترادف ہے۔پولیس ایسے قبیح فعل میں ملوث تمام کرداروں کوبے نقاب کرنے کے ساتھ ساتھ جلدازجلدگرفتارکرتے ہوئے قانونی کٹہرے میں لائے تاکہ مستقبل میں ایسے ہولناک واقعات کی روک تھام ممکن ہوسکے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں