بھارت، کورونا سے ’مرنے‘ والی خاتون زندہ گھر واپس لوٹ آئی

نئی دہلی (نیل فیری رپورٹ )بھارت میں کورونا سے اموات میں اضافے کے ساتھ ساتھ نت نئے تنازعات بھی سامنے آنے لگے، کورونا سے مرنے والی خاتون کے زندہ واپس گھر لوٹنے کے بعد ملک میں نیاہنگامہ کھڑا ہوگیا۔
بھارت کے شہرحیدرآباد کے متھیالا گڈایا نامی شخص نے 15 مئی کو کورونا وائرس سے ’مرنے‘ والی اپنی بیوی کی پلاسٹک پیپر میں لپٹی لاش کو دفن کیاتھا تاہم دوہفتے بعد خاتون کے گھر پہنچنے پر اہل خانہ اور گاؤں کے لوگ حیران رہ گئے۔
خاتون کو 12 مئی کو کورونا کے علاج کے لیے سرکاری اسپتال میں داخل کروایا گیا تھا، ان کے شوہر روزانہ اپنی بیوی کو دیکھنے جاتے تھےتاہم 15 مئی کو وہ کورونا وارڈ میں اپنے بستر پر نہیں تھیں۔ انہوں نے ادھر ادھر ڈھونڈا لیکن وہ نہیں ملیں۔ نرسوں نے انہیں بتایا کہ وہ مر چکی ہیں۔
مزید پڑھیں:کورونا وباء کی صورتحال میں ہمیں اندازہ ہوا کہ خاندان کتنا اہم ہے، شینیرا اکرم
اسپتال کے مردہ خانے سے متھیالا گڈایا نامی شخص کوپلاسٹک میں لپٹی ایک معمر خاتون کی لاش دے دی گئی اور اسی روز ان کی آخری رسومات ادا کر دیں گئیں جبکہ چند روز بعد خاتون کا35 سالہ بیٹا بھی کورونا کے باعث ہلاک ہو گیا ہے۔
بیٹے کی آخری رسومات کی ادائیگی کے بعد رکھی گئی تقریب کے بعد خاتون گھر لوٹ آئی، خاتون کا کہنا ہے کہ صحت یاب ہونے کے بعد کوئی گھر لینے نہیں آیا اس لئے اسپتال نے انہیں واپس گھر جانے کیلئے پیسے دیئے۔
دوسری جانب خاتون کے شوہر کا کہنا ہے کہ اسپتال نے انہیں لاش پلاسٹک کے پیپر میں پلیٹ کر دی تھی اس لئے کھول کر نہیں دیکھا تاہم اسپتال کی غفلت و لاپرواہی پر کوئی کارروائی سامنے نہیں آئی لیکن لوگوں نے کورونا کی صورتحال کے دوران ایسی غفلت و لاپرواہی کے مرتکب اسپتال کے عملے کیخلاف سخت ایکشن کا مطالبہ کیا ہے۔