نیپ / این ایس ایف لانگ مارچ پر پولیس کا دھاوا۔لیاقت حیات درجنوں ساتھیوں سمیت گرفتار

راولاکوٹ ( بیورو رپورٹ) جموں کشمیر نیشنل عوامی پارٹی اور جموں کشمیر نیشنل سٹوڈنٹس فیڈریشن کے تحت بجلی کی لوڈشیڈنگ اور بڑھتی ہوئی مہنگائی کے خلاف دارالحکومت مظفرآباد میں قانون ساز اسمبلی کے باہر احتجاجی دھرنا دینے کے لئے آزادکشمیر کے تمام اضلاع سے نیپ/این ایس ایف کے قافلے مظفرآباد کی طرف روانہ ہوگئے

جبکہ راولاکوٹ پولیس نے شرکاء لانگ مارچ پر دھاوا بولتے ہوئے جموں کشمیر نیشنل عوامی پارٹی کے مرکزی صدر سردار لیاقت حیات کو درجنوں ساتھیوں سمیت کپٹین حسین شہید پوسٹ گریجویٹ کالج گرائونڈ راولاکوٹ سے گرفتار کر لیا ہے ۔ گرفتار ھونے والوں میں ضلعی صدر زولفقار عارف ، مرکزی رہنما سابق امیدوار اسمبلی ناصر جاوید ۔شاہد شارف بھی شامل ہیں

جبکہ مظفر آباد میں جموں کشمیر نیشنل سٹوڈنٹس فیڈریشن کے مرکزی سیکرٹری جنرل مجتبیٰ بانڈے،اور جموں کشمیر نیشنل عوامی پارٹی کے ضلعی چیئر مین کامریڈ صغیرخان کو گرفتار کر لیا گیا ہے

این ایس ایف کے مرکزی ترجمان کے مطابق راولاکوٹ پولیس نے گرین ویلی ہوٹل راولاکوٹ میں نیپ/این ایس ایف کے جاری اجلاس پر پولیس کا کریک ڈاؤن کرتے ہوئے مذید درجنوں کارکنان گرفتار کر لیے ہیں.جموں کشمیر نیشنل۔سٹوڈنٹس فیڈریشن کی مرکزی سینئر نائب صدر کامریڈ ادیبہ جمیل
جموں کشمیر نیشنل عوامی پارٹی کے ممبر نیشنل کونسل کامریڈ عادل خان کو بھی درجنوں ساتھیوں سمیت گرفتار کر لیا گیا ہے

۔نیپ کے مرکزی صدر کے ساتھ گرفتار ہونے والوں میں میرپور ، کوٹلی ، ہجیرہ، کھائی گلہ سے آنے والے نیپِ ،این ایس ایف کے بعض کارکن بھی شامل ہیں ۔گرفتاریوں کیخلاف نیپ این ایس ایف کے کارکنوں نے راولاکوٹ میں احتجاجی مظاہرہ کیا ہے

۔ادھر پانیولہ دھرنے میں شریک جموں کشمیر نیشنل سٹوڈنٹس فیڈریشن کے مرکزی صدرصمد شکیل نے کارکنوں کو ہدایت کی ہے کہ وہ ان گرفتاریوں کے خلاف اپنے اپنے سٹیشنز پر احتجاج کریں جبکہ ان کہا کہنا تھا کہ لانگ مارچ ہر صورت ہوگا ۔گرفتاریاں ہمارے راستے کی رکاوٹ نہیں بن سکتیں ۔ منگل 5جولا ئی کو دن 11بجے لال چوک اپر اڈا سے اسمبلی کی طرف مارچ کیا جائے گا اور اسمبلی کے آگے غیر معینہ مدت تک دھرنا دیا جائے گا۔
جموں کشمیر نیشنل سٹوڈنٹس فیڈریشن کے مرکزی صدر کی قیادت میں راولاکوٹ اور مظفرآباد میں کی جانے والی گرفتاریوں کے خلاف پانیولہ میں بھی احتجاجی ریلی نکالی گئی.