لوڈشیڈنگ کیخلاف احتجاج 15دن کیلئے موخر:ٹائیں ڈھلکوٹ شاہراہ پر ٹریفک 5 ویں روز بحال

ٹائیں، راولاکوٹ ( نیل فیری نیوز)یونین کونسل ٹائیں ، بنگوئیں ، پاچھیوٹ کی عوامی ایکشن کمیٹیوں ، اور انجمن تاجران جنڈاٹھی نے عید الاضحی کے پیش نظرباہمی مشورے کے بعدلوڈشیڈنگ کیخلاف احتجاج 15دن کیلئے موخر کر دیا ہے جبکہ انتظامیہ کو 15 دن کا ٹائم یا گیا ہے کہ اگر لوڈشیڈنگ زیرو پرسنٹ اور کم وولٹیج کا معاملات یکسو نہ ہوئے تو تو پھر دما دم مست قلندر ہوگاقبل ازیں جملہ ایکشن کمیٹیوں اور پونچھ انتظامیہ کے مابین مذاکرات چوتھے روز ناکام ہو گئے تھے ۔

انتظامیہ نے ایکشن کمیٹیوں کو یقین دہانی کروائی تھی کہ لوڈشیڈنگ کا دورانیہ 8 گھنٹے کیا جائے گا جس کو ایکشن کمیٹیوں نے نہ مانتے ہوئے لوڈشیڈنگ صفر کرنے کا مطالبہ برقرار رکھا تھا اورڈپٹی کمشنر پونچھ اور دیگر افسران کو دو ٹوک جواب دیا تھا کہ لوڈشیڈنگ کے مکمل خاتمے تک کوئی بات نہیں ہوسکتی۔ جبکہ عوامی ایکشن کمیٹیوں نے راست اقدام اٹھانے کا اعلان کرتے ہوئے بجلی کے بل نہ جمع کروانے کا اعلان بھی کیا تھا ۔ متفقہ فیصلے کے تحت عوامی اتحاد ٹائیں نے مجید گلہ سے ٹائیں ڈھلکوٹ شاہراہ رکاوٹیں ہٹاتے ہوئے بحال کر دی ، جبکہ عوامی ایکشن کمیٹی شمالی ٹائیں اور انجمن تاجران تھلہ نے 5 روز سے جاری دھرنا ختم کرتے ہوئے سڑک ٹریفک کے لئے بحال کر دی

۔جنڈاٹھی سے ہارون کیانی کے مطابق انجمن تاجران جنداٹھی کے ذمہ داران نے کہا ہے کہ جنداٹھی میں جاری پہیہ جام ہڑتال کو شرکا دھرنے کی باہمی مشاورت سے ٹرانسپورٹر حضرات مسافروں اور عوام کی مشکلات کے پیش نظر آج سے 15 دن کے لیے موخر کیا جا رہا ہے۔ہڑتال کو ختم کرنے میں انتظامیہ اور حکومت کا کوی کردار نہیں عوامی مطالبے پہ شرکا احتجاج اور انجمن تاجران نے خود یہ فیصلہ کیابجلی تحریک پہ احتجاج تیسرے اور فیصلہ کن مراحلہ میں داخل ہوچکا جس کا اعلان بہت جلد کیا جاے گا جب تک عوامی کیمٹی کے مطالبات منظور نہیں ہوتے تحریک جاری رہے گی۔مشاورتی عمل کا اغاز ہوچکا ہے جلد اگلا لایا عمل دیا جائے گا۔ عوام کو سول نافرمانی کی تحریک چلانے پہ مجبور نہ کیا جائے۔جائز مطالبات کو منظور کیا جائے تمام لوگ پور رہیں پور امن احتجاج عوام کا حق ہے انشااللہ عوام کے حقوق کے جنگ جاری رہے گی

۔ ادھر جموں کشمیر نیشنل سٹوڈنٹس فیڈریشن کے مرکزی صدر صمد شکیل، چیف آرگنائزر نیپ صغیر چوہدری، عمیر امتیاز اور محسن عزیز کو مظفرآباد انتظامیہ نے زبردستی پولیس وین میں ڈال کر کوہالہ کے قریب اتار دیا ۔ مرکزی رہنما ئوں نے کوہالہ سے جب واپس مظرآباد شہر میں جانے کی کوشش کی تو پولیس کی بھاری نفری نے انہیں واپس انٹر ہونے سے روک دیا۔ مظفرآباد پولیس کے مطابق مرکزی صدر این ایس ایف صمد شکیل، مرکزی صدر نیپ لیاقت حیات، مرکزی چیف آرگنائز صغیر چوہدری، چیئرمین سٹڈی سرکل محسن عزیز، چیئرمین پبلسٹی بورڈ عمیر امتیاز اور دیگر نیپ/این ایس ایف کے مرکزی رہنماں پر 3ماہ کے لیے مظفرآباد شہر میں داخل ہونے کی پابندی لگا دی ہے ۔